لعل و گُہَر کہاں ھیں، دفینوں سے پُوچھ لو

0 46
لعل و گُہَر کہاں ھیں، دفینوں سے پُوچھ لو
سینوں میں کافی راز ھیں، سینوں سے پُوچھ لو
جَھیلا ھے مَیں نے تین سو پینسٹھ دُکھوں کا سال
چاھو تو پچھلے بارہ مہینوں سے پُوچھ لو
قبروں کے دُکھ سے کم نہیں کچّے گھروں کے دُکھ
تم زندہ لاشوں یعنی مکینوں سے پُوچھ لو
چوتھا گواہ اندھا ھے، حد کس طرح لگے ؟؟؟
عینی گواہ تین ھیں، تینوں سے پُوچھ لو
مَیں جُونہی بوئے بیج، شجر پُھوٹنے لگے
مُجھ پر یقیں نہیں تو زمینوں سے پُوچھ لو
ایک آدھ تو کرے گی ھی اقرار لازماً
دو تین چار پانچ حسینوں سے پُوچھ لو
سمجھو گے دل کی رمز مُجھی سے مگر ابھی
تُم شوق پُورا کرلو، ذھینوں سے پُوچھ لو
چِھن جائے گھر تو کیسے رُلاتی ھے بےگھری
ٹُوٹی انگوٹھیوں کے نگینوں سے پُوچھ لو
سچ سچ بتائیں گے وہ تمہیں ڈُوبنے کا لُطف
دریا کی تہہ میں غرق سفینوں سے پُوچھ لو
اپنے گُرو کے طور پہ لیں گے سب ایک نام
تُم شہر بھر کے سارے کمینوں سے پُوچھ لو
نیچے اُترتے وقت اُسے موچ آگئی
آگے کا سارا واقعہ زینوں سے پُوچھ لو
پوچھو نہ سجدہ گاہ سے سجدوں کی چاشنی
ھاں پوچھنا ھی ھے تو جبینوں سے پُوچھ لو
ڈستے ھیں کس ترنگ میں، پُھنکارتے ھیں کیوں
سانپوں کی نفسیات خزینوں سے پُوچھ لو
جو بات اھلِ عرش بھی بتلا نہیں سکے
فارس ! وہ بات خاک نشینوں سے پُوچھ لو
"صدائے مسلم" تحاریر ای میل سروس
اس سہولت کو حاصل کرنے سے آپ کو تمام تحاریر ای میل پتہ پر موصول ہونگی